6

سونے کی قیمتوں میں مسلسل اضافے نے پاکستانی عوام کو چاندی کے زیورات خریدنے پر مجبور کردیا

سونے کی قیمتوں میں مسلسل اضافے نے پاکستانی عوام کو چاندی کے زیورات خریدنے پر مجبور کردیا، سونے کی چمک دمک کے شوقین اب چاندی اور آرٹیفشیل جیولری خرید کر شوق پورا کررہے ہیں۔

پاکستان میں فی تولہ سونے کے نرخ ایک لاکھ 12 ہزار 700 روپے تک پہنچ چکے ہیں جبکہ فی تولہ چاندی 1400 روپے کی ہے۔

سونے کی قیمت میں روز بروز اضافے کے بعد چاندی اور آرٹیفشل جیولری کی دکانوں پر رش بڑھ گیا ہے۔ عوام کہتے ہیں کہ اتنا مہنگا سونا کیسے خریدیں؟، ان حالات میں تو دیگر دھاتوں کے زیورات ہی خریدے جاسکتے ہیں۔

خواتین کہتی ہیں کہ اتنا مہنگا سونا خریدنا اب کسی کے بس کی بات نہیں، تبھی چاندی کے زیورات خریدتے ہیں یا آرٹیفشل جیولری، اس کے علاوہ کوئی چارہ نہیں۔

دوسری طرف جیولرز بھی اس صورتحال سے پریشان ہیں۔ ان کے مطابق قیمتیں بڑھنے سے سونے کے زیورات کی مانگ میں 70 فی صد تک کمی آئی ہے، سونے کے زیورات کی صنعت سے منسلک زیادہ تر افراد اب چاندی کا زیور بنانے لگے ہیں۔

سیکریٹری جنرل صرافہ اینڈ جیولرز ایسوسی ایشن لاہور رانا معظم وحید کا کہنا ہے کہ سونے کی قیمت بڑھنے سے زیورات سازی کی صنعت بھی بری طرح متاثر ہوئی ہے، بہت سارے لوگ اب سونے کو چھوڑ کر چاندی کے کاروبار میں آگئے ہیں۔

پاکستان میں یکم جنوری 2020ء کو سونے کے فی تولہ نرخ 88 ہزار 150 روپے تھے جو اگست 2020ء کے پہلے ہفتے میں ایک لاکھ 32 ہزار روپے کی بلند ترین سطح تک پہنچ گئے تھے۔

جیولرز کہتے ہیں کہ اگر اسی طرح پاکستانی کرنسی کی قدر میں کمی اور بین الاقوامی مارکیٹ میں تیزی جارہی رہی تو چاندی اور آرٹیفشل جیولری کی طلب میں مزید اضافہ ہوجائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں